میں نے ریٹائرمنٹ اس لیے لی کیوں کہ مجھےجسپرت بمراہ کی طرح یہ نہیں ملا۔۔ محمد عامر نےحیران کن شکوہ کر ڈالا

122

کرکٹ سے جڑی ہرخبر اور زبردست ویڈیوز کے لیے ہمارا پیج لایک کریں
پاکستان ٹیم کے سابق فاسٹ بولر محمد عامر نے ٹیم مینجمنٹ کی حمایت نہ ہونے کے بعد ہندوستانی فاسٹ بولر جسپریت بمراہ کی مثال دی ہے۔ ایک انٹرویو میں محمد عامر کا کہنا تھا کہ برابر کی کارکردگی کا مظاہرہ کرنے کے باوجود


محمد عامر کا کہنا تھا کہ میرے خیال میں صرف 4 یا 5 میچوں کی کارکردگی کو دیکھنا درست ذہنیت نہیں ہے، اگر آپ کو یاد ہو تو آسٹریلیا کیخلاف سیریز کے دوران جسپریت

بمراہ کی 16 میچوں میں صرف ایک وکٹ تھی لیکن کسی نے ان سے سوال جواب نہیں کیا کیونکہ سب جانتے ہیں کہ وہ میچ ونر بولر ہے، یہ وہ وقت تھا جب بمراہ کو ہندوستانی ٹیم مینجمنٹ کی مدد چاہئے تھی جو انہیں ملی۔

محمد عامر کا مزید کہنا تھا کہ ٹیم مینجمنٹ کو یہ کام دیا گیا ہے کہ جب کوئی کھلاڑی کارکردگی کا مظاہرہ نہ کررہا ہو تو اس کی مدد کرے بجائے اس کے کہ اسےٹیم سے نکال دے،


اگر ایسا ہی ہے تو پھر ہمیں آپ کو کرسٹیانو رونالڈو جیسے کھلاڑیوں پر مشتمل پوری ٹیم دینی چاہئے تاکہ آپ بیٹھ کرآرام کریں اور کچھ بھی نہ کریں۔ انہوں نے انٹرنیشنل کرکٹ میں واپسی کی افواہوں کو مسترد کرتے ہوئے یہ بھی کہا کہ

ٹیم مینجمنٹ کے ساتھ ان کا کوئی ذاتی مسئلہ نہیں ہے۔ عامر کا کہنا تھا کہ میں نے اپنے تمام آپشنز کو دیکھا اور ریٹائرمنٹ کے بارے میں فیصلہ لینے سے پہلے صورتحال کا جائزہ لیا،

میں کرکٹ سے لطف اندوز ہو رہا ہوں اور اپنی فیملی کے ساتھ وقت گزار رہا ہوں، اس وقت ریٹائرمنٹ واپس لینے کے بارے میں کوئی منصوبہ نہیں بنایا ہے۔

محمد عامر نے کہا کہ اگر بات صرف میری کارکردگی کی ہوتی میں کبھی ریٹائرمنٹ کا اعلان نہ کرتا لیکن ٹیسٹ کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کے بارے میں میرے بارے میں

ٹیم منیجمنٹ کے بیانات نے مجھے واقعی تکلیف دی، ان کے ساتھ میرا کوئی ذاتی مسئلہ نہیں ہے کیونکہ وہ میرے بڑے اور کرکٹ لیجنڈ ہیں۔