انوکھی رکاوٹ ڈالنے پر تھیلاکا آئوٹ، مکی آرتھر غصہ میں بھاگ کھڑے ہوئے، ویڈیو وائرل

174

کرکٹ سے جڑی ہرخبر اور زبردست ویڈیوز کے لیے ہمارا پیج لایک کریں
سری لنکا کرکٹ ٹیم ویسٹ انڈیز میں ٹی 20 سیریز ہارنے کے بعد پہلا ایک روزہ میچ بھی ہارگئی، اہم ترین بات سری لنکا کے آئوٹ ہونے والے تیسرے بیٹسمین اوپنر گونا تھیلا کا تھے، جن کا آئوٹ ایک ڈرامہ میں تبدیل ہوگیا،


سوشل میڈیا پر چلنے والی بحث میں پاکستان میں موجود ویسٹ انڈیز کے سابق کپتان ڈیرن سیمی بھی کود پڑے. واقعہ کچھ یوں ہوا کہ سری لنکا کی اننگ جاری تھی.

105رنزکا عمدہ آغاز کرنے والی ٹیم بڑے اسکور کی توقع کر رہی تھی کہ پہلے کپتان کرونا رتنے کو پولارڈ نے52کے اسکور پر اپنی ہی بال پر ناممکن کیچ پکڑ کر رخصت کیا،

بعد میں 119کے مجموعہ پر دوسرے سیٹ بیٹسمین دنوشکا گونا تھیلا کا کو متنازعہ آئوٹ کرکے مہمان ٹیم کی بنیادیں ہی ہلادیں،55اسکور کرنے والے تھیلاکا نے پولارڈ کی تیز بال کو مشکل سے روکا تو اسٹرئیک اینڈ پر موجود بیٹسمین

رن لینے کے لئے دوڑے تو تھیلا کا جو شاٹ کھیلتے ہوئے اپنی کریز سے باہر موجود تھے اوررنزکے لئے بھی نہیں بڑھ رہے تھے، پیسر کو جارحانہ انداز میں اپنی جانب دوڑتے ہوئے دیکھ کر ہکا بکا رہ گئے،

اتنے میں پولارڈ بیتسمین کے سامنے موجود گیند کو اٹھاکر انہیں رن آئوٹ کرنے کی کوشش کرنے لگے تو سامنے تھیلاکا موجود تھے جو اس کی توقع نہیں کر رہے تھے،

انہوں نے دیو قامت بائولر کو اپنے سر پر دیکھ کر پیچھے ہٹنے کی کوشش جو کی تو بائولر نہ صرف ان سے ٹکرائے بلکہ بال بھی نہ اٹھاسکے کیونکہ بیٹسمین نے بال کو ہلکا سا پش کرکے دور کردیا تھا.

فیلڈ میں رکاوٹ ڈالنے پر پولارڈ نے آئوٹ کی اپیل کی، امپائر نے تھرڈ امپائر سے رجوع تو کیا لیکن سافٹ سگنل آئوٹ کا ہی دیا جسے تھرڈ امپائر نے برقرار رکھا.

فیلڈ میں رکاوٹ ڈالنے پر بیٹسمین آئوٹ ہوتا ہے،ماضی میں ایسے کئی واقعات ہوچکے ہیں لیکن تھیلاکا کی حرکت غیر ارادی تھی .

قانون کی کتا ب میں ایسا کوئی حوالہ نہیں کہ اس سے استثنیٰ مل جاتا، چنانچہ آئوٹ قرار دیئے جانے پر سری لنکن ہیڈ کوچ مکی آرتھر شدیدغصہ میں آگئے اور انہوں نے دریسنگ روم چھوڑا اور میچ ریفری کی جانب دوڑ لگادی لیکن جو نقصان ہونا تھا وہ برقرار رہا.


گونا تھیلا کا کو رن آئوٹ قرار دیئے جانے کے بعد سوشل میڈیا پر بحث چھڑ گئی، متعدد کرکٹرز نے بھی رائے دی، پاکستان میں موجود ڈیرن سیمی نے بھی ٹویٹ کیا ،انہوں نے لکھا کہ ایسا ویسا سوچنے کی ضرورت نہیں ہے، اگر میں ہوتا تو آئوٹ کی اپیل ہی نہ کرتا.