محمد حفیظ کی ملک اور ٹیم کی خاطربڑی قربانی،آپ بھی جان کرحیران رہ جائیں گے

100

کرکٹ سے جڑی ہرخبر اور زبردست ویڈیوز کے لیے ہمارا پیج لایک کریں
قومی کرکٹ ٹیم کے سینئر کھلاڑی محمد حفیظ کا کہنا ہے کہ انہیں مصباح الحق کی کوچنگ میں کھیلتے ہوئے کبھی کوئی مسئلہ درپیش نہیں ہوا ۔ لاہور میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے 40 سالہ محمد حفیظ کا کہنا تھا کہ


2020ء ان کے کیریئر کا بہترین سال ثابت ہوا تھا جس میں وہ پاکستان کے لیے سب سے زیادہ رنز بنانے والے بلے باز بنے، انہیں پاکستان کے لیے کھیلتے ہوئے 17 سے 18 سال ہوگئے ہیں

اور ان کی پہلی ترجیح ہمیشہ پاکستان رہی ہے جس میں کوئی ابہام نہیں ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ جنوبی افریقہ کے خلاف ٹی ٹونٹی سیریز میں بائیو سیکور ببل کے لیے

دستیاب ہوگا کیوں کہ اس سے قبل ٹی ٹین لیگ میں بھی بائیو سیکور ببل میں ہوں گا۔ حفیظ کا کہنا تھا کہ اگر کسی جگہ پر کمی آبھی رہی ہے تو


وہ پلیئرز نے اپنی پرفارمنس کے ذریعے پوری کرنی ہے، اگرکسی کھلاڑی سے پرفارم نہ ہو تو اپنی خراب کارکردگی کسی اور پر نہیں ڈالنی چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ مجھے 2 گھنٹے کی بیٹنگ پریکٹس بھی درکار ہو تو وہ بھی ملی ہے ۔

محمد حفیظ کا کہنا تھا کہ انہیں کبھی محسوس نہیں ہوا کہ ان کے پاکستان کرکٹ بورڈ کے ساتھ تعلقات خراب ہیں ۔ فاسٹ بائولر محمد عامر سے متعلق بات کرتے ہوئے محمد حفیظ کا کہنا تھا کہ

عامر چھوٹے بھائی کی طرح ہے، انہوں نے اپنے کیریئر کے بارے میں جو بھی فیصلہ کیا وہ اس کا احترام کرتے ہیں۔ محمد حفیظ نے کہا کہ پیٹرن ان چیف عمران خان سے ملاقات میں وہ فرنٹ مین تھے،

وزیراعظم نے ہمیں عزت دی، ہم سب نے مل کر ڈیپارٹمنٹل کرکٹ کی بحالی کے لیے بات کرنی کی ٹھانی تھی اوراس بارے میں جو بھی فیصلہ ہوا اس کا احترام کرتا ہوں، آج بھی ڈیپارٹمنٹ کرکٹ کے حق میں ہوں، ہم لوگ اسی کی بدولت سے پروڈکٹ بنے ہیں۔