کیا مصباح الحق کو ہیڈ کوچ کے عہدے سے واقعی ہٹایا جا رہا ہے؟ راشد لطیف اورشعیب اختر نے بتا دیا

205

کرکٹ سے جڑی ہرخبر اور زبردست ویڈیوز کے لیے ہمارا پیج لایک کریں
آسٹریلیا اور انگلینڈ میں قومی ٹیم کی اوسط درجے کی کارکردگی کے بعد چیف سلیکٹر کا عہدہ چھوڑنے والے مصباح الحق کا اب ہیڈ کوچ کا عہدہ بھی خطرے میں پڑ گیا ہے اور رپورٹس ہیں کہ دورہ نیوزی لینڈ کے بعد


مصباح الحق اس عہدے سے بھی محروم ہوسکتے ہیں جبکہ شعیب اختر اور راشد لطیف نے بھی ان خبروں کی توثیق کی ہے۔ مصباح نے چیف سلیکٹر کا عہدہ چھوڑنےکا اعلان کیا تو

محمد وسیم کو یہ عہدہ سونپ دیا گیا تھا اور مصباح الحق بطور ہیڈ کوچ ذمہ داریاں ادا کرنے لگے تاہم اب نیوزی لینڈ میں ٹی 20 اورٹیسٹ سیریز میں شکست کے بعد ان کا یہ عہدہ بھی

خطرے میں پڑ گیا ہے اور یہ خبریں گردش کر رہی ہیں کہ پی سی بی نے انہیں فارغ کر کےغیرملکی کوچ لانے کا فیصلہ کیا ہے جس کیلئے گرانٹ فلاور اور گیری کرسٹن ممکنہ امیدوارہیں۔


پی ٹی وی سپورٹس کے پروگرام کے میزبان نے مصباح الحق کو ہیڈ کوچ کے عہدے سے ہٹانے کے حوالے سے پروگرام کے مہمان اور قومی ٹیم کے سابق کپتان راشد لطیف سے پوچھا کہ

کیا مصباح کو ہیڈ کوچ کے عہدے سے ہٹایا جا رہا ہے تو انہوں نے جواب دیا کہ اس بات میں کافی حد تک حقیقت ہے۔ جب پروگرام میں موجود دوسرے مہمان اور قومی ٹیم کے سابق فاسٹ باؤلر شعیب اختر سے سوال کیا گیا تو

انہوں نے بھی اس بات کی توثیق کرتے ہوئے کہا کہ یہ صرف افواہ نہیں ہے، اس بارے میں بات چیت ہو رہی ہے۔ راشد لطیف نے اس بارے میں اظہار خیال کرتے ہوئے مصباح کو ہیڈ کوچ کے عہدے سے ہٹانے کے خیال سے اتفاق نہ کرتے ہوئے کہا کہ

پاکستان کرکٹ اب اس چیز کی متحمل نہیں ہو سکتی، ہم ٹیسٹ کرکٹ میں پچھلے کچھ سالوں میں بہت نیچے آئے ہیں اور بہت پیچھے نظر آ رہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ توقع کرتے ہیں کہ یہ افواہ حقیقت کا روپ نہیں دھار لے کیونکہ

ہم بڑی مشکل سے مصباح کو بطور چیف سلیکٹر لے کر آئے، ہم نے ہیڈ کوچ بھی بنایا اور وہ اسلام آباد یونائیٹڈ کے بھی کوچ رہے لیکن اچانک ایسا کیا ہوا کہ وہ ہر چیز چھوڑتے چلے گئے۔

سابق وکٹ کیپر نے کہا ہے کہ بڑے نام اس عہدے پر آنے کیلئے ہامی نہیں بھرتے ہیں لیکن مصباح نے ہامی بھر لی، اگر آپ نے مصباح کو ہٹا دیا تو وہ بالکل بھی نہیں آئیں گے، تو ایسا نہ کریں کہ ہمارے پرانے کھلاڑی بددل ہو جائیں اور

امید ہے کہ پاکستان کرکٹ بورڈ ایسا قدم نہیں اٹھائے گا۔ اس موقع پر شعیب اختر نے کہا ہے کہ مصباح کی صلاحیت اور استعداد کا ہمیں بھی پتا تھا اور انہیں بھی پتا تھا، مصباح اپنی بہترین کار کردگی دکھا رہا ہے،

دیکھنے والے کی غلطی ہے کہ آپ کو یہ ‘بہترین’ نظر نہیں آیا تھا، دیکھنے والوں کی غلطی ہے کہ ان کا ‘بہترین’ ٹھیک نہیں ہے، وہ بہترین دیکھنا ہی نہیں چاہتے۔ راولپنڈی ایکسپریس کے نام سے مشہور سابق فاسٹ باؤلر نے

دعویٰ کیا ہے کہ تین مہینے میں پاکستان کرکٹ بالکل ٹھیک ہو سکتی ہے، میں گارنٹی دیتا ہوں، تین مہینے، تین بندے، تین ادارے پکڑوں گا، تین بندے لاؤں گا، نہ ٹیم صحیح ہو تو میرا نام تبدیل کر دینا، تاریخ میں سے میرا نام ہٹا دینا۔