نئےسال 2021 میں قومی کرکٹ ٹیم کےشیڈول سے سابق کپتان انضمام الحق ناخوش،وجہ بھی بتادی

124

کرکٹ سے جڑی ہرخبر اور زبردست ویڈیوز کے لیے ہمارا پیج لایک کریں
پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان انضمام الحق نے ایک طرف 2021 کے قومی کرکٹ ٹیم کے شیڈول پرتنقید کی ہے تو دوسری طرف ایک اہم تجویز بھی دی ہے۔ اے آر وائی نیوز کے مطابق انضمام الحق نے نئے سال کے لیے


انضمام الحق نے پاکستانی شیڈول پرتنقید کر تے ہوئے کہا کہ رواں سال جنوبی افریقا نے پاکستان آنا ہے، مختلف ممالک کے خلاف شیڈول سیریز میں 2 ٹیسٹ میچز رکھے گئے ہیں یا محدود اوورز کی ایک سیریز،

میں ایسے ٹور کو سیریز نہیں کہتا، سیریز میں تینوں فارمیٹ ہوں اور کم سے کم 3 میچز کی سیریز ہو، پاکستان کے شیڈول میں کہیں 3 ٹیسٹ نہیں ہیں، یہ اچھی بات نہیں۔

سابق کپتان انضمام الحق نے یاد دلایا کہ 1992 ورلڈ کپ کے بعد ہم نے انگلینڈ کا 136 دن کا دورہ کیا تھا، 5 ون ڈے، 5 ٹیسٹ اور انگلینڈ میں 13 کاؤنٹی میچز کھیلے گئے تھے،


انضمام الحق نے کہا کہ اتنی مصروفیات میں کھلاڑیوں کو گروم ہونے کا موقع ملا، اس ٹیم میں کئی نئے لڑکے بھی تھے، اس دورے سے وہ سیٹ ہوگئے، لیکن نئے سال میں پاکستانی مصروفیات میں مجھے ایسا نہیں لگتا،

اب دیکھیں کہ جنوبی افریقا 2 ٹیسٹ، 3 ٹی 20 میچز کھیلے گا، پھر پاکستان نے جنوبی افریقا کا دورہ کرنا ہے، وہاں بھی محدود اوورز کی سیریز ہوگی۔ انضمام نے کہا کہ رواں برس ایشیا کپ ہے، پی ایس ایل ہے لیکن پاکستان نے جنوبی افریقا جانا ہے،

انگلینڈ نے یہاں آنا ہے، پھر ویسٹ انڈیز سے سیریز ہے، نیوزی لینڈ نے پاکستان آنا ہے، پاکستان نے بنگلہ دیش جانا ہے، ورلڈ ٹی 20 بھی ہے لیکن کسی باہمی سیریز میں تینوں فارمیٹ نہیں ہیں اور یہ اچھی بات نہیں ہے۔

انضمام نے تجویز دی کہ اگرچہ کو رونا کی وجہ سے کافی مسائل ہیں لیکن میں پھر بھی تجویز دوں گا کہ تینوں فارمیٹ کی مکمل سیریز ہوں، ٹیسٹ میچز 3 ہوں تاکہ پلیئرز گروم ہو سکیں۔