شرجیل خان کی قومی ٹیم میں واپسی سےمتعلق بحث، شاہد آفریدی بھی میدان میں کودپڑے

122

کرکٹ سے جڑی ہرخبر اور زبردست ویڈیوز کے لیے ہمارا پیج لایک کریں
پاکستان کرکٹ ٹیم کے مایہ ناز سابق کپتان شاہد خان آفریدی نے کہا ہے کہ پاکستان کرکٹ بورڈ نے اگر ماضی میں میچ فکسنگ میں ملوث کھلاڑیوں کیلئے کوئی مثال قائم کی ہوتی تو آج ہمیں بدنامی کا سامنا نہیں کرنا پڑتا


تفصیلات کے مطابق پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) کے پانچویں سیزن میں شرجیل خان کی شرکت کے بعد اب قومی ٹیم میں شامل کرنے کی بحث ہو رہی ہے اور بالخصوص رواں سال

آسٹریلیا میں شیڈول ٹی 20 ورلڈکپ کیلئے انہیں سکواڈ میں شامل کرنے سے متعلق باتیں شروع ہو چکی ہیں اور اس حوالے سے کوئی ان کی حمایت کر رہا ہے تو کسی نے مخالفت بھی کی ہے کہ

وہ میچ فکسنگ میں ملوث رہے ہیں. ٹیسٹ آل راؤنڈر محمد حفیظ نے گزشتہ دنوں ایک بیان میں کہا تھا کہ پی سی بی کو فکسنگ میں ملوث کھلاڑیوں کیلئے سخت قوانین بنانے چاہئیں


تاہم پی سی بی کے سی ای او وسیم خان نے انہیں اس بیان پرتنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ محمد حفیظ کو اپنی کرکٹ پر توجہ دینی چاہئے اور ایسے بیانات سے گریز کرنا چاہئے. اب شاہد خان آفریدی نے بھی دبے الفاظ میں محمد حفیظ کے موقف کی حمایت کر دی ہے جن کا کہنا ہے کہ

بہت ساری چیزوں کو دیکھ کر چلنا پڑتا ہے اور سخت فیصلے کرنے ہوتے ہیں لیکن افسوس کے ساتھ کہنا پڑتا ہے کہ ہم نے ماضی میں اس بارے میں نہ کچھ کیا اور نہ ہی مثالیں قائم کیں جس کے بعد اس طرح کے واقعات سامنے آرہے ہیں.

مایہ ناز آل راؤنڈر نے مزید کہا کہ حقیقت یہ ہے کہ ماضی میں ہم سے بہت غلطیاں ہوئیں، ہم نے وہاں مثالیں قائم نہیں کیں لیکن اب محمد حفیظ کی بات سے اتفاق کرتا ہوں اور وہ درست کہہ رہا ہے، اگر اس قسم کے معاملات سے مستقبل میں بچنا چاہتے ہیں تو اب آپ قوانین بنائیں.