تینو ں فارمیٹ میں کپتانی کا کوئی،پریشر نہیں کیوں کہ، بابر اعظم نے شاندار بات کہہ ڈالی

8

کرکٹ سے جڑی ہرخبر اور زبردست ویڈیوز کے لیے ہمارا پیج لایک کریں
قذافی اسٹیڈیم لاہور میں پریس کانفرنس میں قومی کرکٹ ٹیم کے کپتان بابر اعظم کا کہنا تھا کہ سرفراز احمد اور اظہر علی سے بہت کچھ سیکھا ہے، وائٹ بال کا نائب کپتان رہتے ہوئے بھی سیکھا ہے۔


میں بیٹنگ اور کپتانی میں پوری ذمہ داری لیتا ہوں اور پریشر میں ہی کھیلنے کا مزہ آتا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ پرفارمنس سے اعتماد میں اضافہ ہوتا ہے اور نئی ذمہ داریوں کا پریشر نہیں،

کھیلتے ہوئے انجوائے کرتا ہوں جب کہ بیٹنگ کا اضافی،دبا ﺅ نہیں، ہر اننگز چیلنج سمجھ کر کھیلتا ہوں۔ کپتان قومی کرکٹ ٹیم نے کہا کہ دورہ نیوزی لینڈ ہم سب کے لیے امتحان ہو گا،

ہم مثبت کرکٹ کھیلنے کی کوشش کریں گے جب کہ ہماری ٹیم کا کمبی نیشن زبردست ہے اور سیریز جیت کر لوٹنے کی کوشش کریں گے، نیوزی لینڈ آسان حریف نہیں تاہم


نیوزی لینڈ آسان حریف نہیں تاہم اچھی کرکٹ دیکھنے کو ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ نیوزی لینڈ میں بھی بڑی اننگز کھیلنے کی پوری کوشش کروں گا۔ پریس کانفرنس کے دوران ٹیم میں گروپنگ کے حوالے سے پوچھے جانے والے سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ

ہم بحثیت ٹیم گروپ ہو تے ہیں، گروپنگ والی بات نہیں ہے، سب اچھا کھیلنے کی کوشش کر تے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ نیوزی لینڈ کی سیریز آسان نہیں ہو گی لیکن ٹیم کے تمام کھلاڑی بہترین پرفارمنس کا مظاہرہ کر کے مثبت نتائج لا نے کی پوری کوشش کریں گے۔

بابراعظم نے کہا کہ نیوزی لینڈ کا دورہ بہت اہم ہے، نیوزی لینڈ کی ٹیم کی اچھی کار کردگی ہے لیکن ہماری ٹیم کا ریکارڈ نیوزی لینڈ کے خلاف اچھا رہا ہے۔ ہم نے انگلینڈ میں بھی اچھی کرکٹ کھیلی ہے اور پوری امید ہے کہ ہم نیوزی لینڈ میں بھی اچھی کرکٹ کھیلیں گے۔