ہ پانچ کھلاڑی اپنی کارکردگی کی بنا پر پاکستان کرکٹ ٹیم کا حصہ بن سکتےہیں

289

کرکٹ سے جڑی ہرخبر اور زبردست ویڈیوز کے لیے ہمارا پیج لایک کریں
پاکستان کا نیشنل ٹی ٹوئنٹی کپ 30 ستمبر کو شروع ہونے والا ہے ۔ یہ ٹورنامنٹ بہت سارے کھلاڑیوں کے لیے پاکستان کی قومی ٹیم میں جگہ بنانے کابہترین موقع ہے۔ خاص طور پر زمبابوے کے ساتھ ہونے والی ہوم سیریز میں۔


پاکستان نے انگلینڈ کے دورے پر 3 ٹی ٹوئنٹی انٹر نیشنل میچز کی سیریز کھیلی۔ ایک میچ تو بارش کی نذر ہو گیا۔ بقیہ دو میچز میں پاکستان نے بیٹنگ میں اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کیا اور

حریف ٹیم کو دونوں میچز میں ایک بڑا ہدف دیالیکن پاکستانی بیٹنگ میں ابھی بھی ایک یا دو بیٹسمین بہتر جگہ بنا سکتے ہیں۔ ذیل میں ان 5 کھلاڑیوں کو شامل کیا جا رہا ہے جو نیشنل ٹی ٹوئنٹی کپ میں اچھا پرفارم کر کے قومی ٹیم میں اپنی جگہ بنا سکتے ہیں۔

شرجیل خان

شرجیل خان بائیں ہاتھ سے بلےبازی کرنے والے جارحانہ نوعیت کے بلے باز ہیں۔ وہ پاکستانی ٹیم میں ضرور شامل ہوتے اگر وہ سپاٹ فکسنگ کیس کا شکار نہ ہوتے۔

انہوں نے اپنے بیٹنگ کے سٹائل سے دنیا کے اعلیٰ ترین باؤلنگ اٹیکس کو مات دے رکھی ہے۔ لیکن اب دیکھنا یہ ہے کہ کیا وہ اچھا پرفارم کرکے ٹیم میں اپنی جگہ بنانا چاہتے ہیں یا نہیں۔ ان کی اس خواہش کو ٹی ٹوئنٹی کپ میں پرفارمنس کی بنیاد پر دیکھا جا سکے گا۔

روحیل نذیر

محمد رضوان انگلینڈ کے دورے پرٹیسٹ مین آف دا سیریز قرار پائے۔ اس بات میں کوئی شک نہیں کہ وہ بہت اچھے وکٹ کیپر ہیں لیکن ان کی پاور ہٹنگ میں کمی ان کی بیٹنگ کی پوزیشن کو مستقل رہنے سےروک دیتی ہے ۔

سرفراز احمد کی وکٹوں کے پیچھےکچھ اچھی کارکردگی نہیں ہے ۔ اس سب سے روحیل نذیر جنہوں نے پی ایس ایل کا پانچواں ایڈیشن ملتان سلطان کی طرف سے کھیلا

ان کے لیے ٹیم میں جگہ بنانے کے لیےبہترین موقع ہے ۔ 18 سالہ وکٹ کیپر بیٹسمین نیشنل ٹی ٹوئنٹی کپ میں ناردرن ریجن کی نمائندگی کریں گے۔

احسن علی

فخر زمان اپنی غیرتسلسل بیٹنگ کی وجہ سے ٹیم کا مستقل حصہ نہیں بنتے۔ احسن علی کو بنگلہ دیش کے خلاف موقع ملا تھا لیکن وہ صحیح طور پر اپنے آپ کو ثابت نہیں کر سکے۔ 26 سالہ کھلاڑی اھسن علی کے لیے

فیلڈنگ میں اچھا پرفارم کرنا بہت مشکل نظر آرہاتھا۔ انہوں کوئٹہ گلیڈ ایٹز کے لے بہت اچھا پرفارم کیا جس سے ان کے ٹیلنٹ کا بخوبی اندازہ لگایا جا سکتا ہے۔ ان کو سندھ کی طرف سے خرم منظور یا شرجیل کے ساتھ اوپننگ کرنے کا موقع مل سکتا ہے۔

اعظم خان

بہت ساری تنقید کا سامنا کرنے کےبعد اعظم خان نے پی ایس ایل کے پانچویں ایڈیشن میں اپنی پاور ہٹنگ صلاحیتوں سے سب کو حیران کر دیا ۔ انہوں نے اپنی فٹنس پر بھی کافی کام کیا ہے اور

انہیں اس ٹورنامنٹ میں اپنی صلاحیتیں دکھانےکا دوبارہ موقع مل سکتا ہے۔ پاکستان ٹیم کو لوئر آڈر میں ایک ایسے بلے باز کی اشد ضرورت ہے جو اننگز کے آخر میں چھکے لگا سکے ۔ اگر وہ اچھا پرفارم کرتے ہیں تو وہ اس مسئلے کا حل ثابت ہو سکتے ہیں ۔

شان مسعود

حالیہ دنوں میں جس بیٹسمین نے سب سےزیادہ بہتری دکھائی ہے وہ شان مسعود ہیں۔ شان مسعود نے پی ایس ایل فائیو میں 125 کے زائد کے سٹرائیک ریٹ کے ساتھ 250 رنز سکور کیے۔

مسعود نے ملتان سلطان کی قیادت کرتے ہوئے ٹیم کو پہلی پوزیشن تک پہنچایا۔ اگر وہ جنوبی پنجاب کو بھی جیت دلاسکے تو ان کو قومی ٹیم میں شامل کیا جا سکتا ہے۔