امام الحق کے بارے میں تحقیقات مکمل پی سی بی نے فیصلہ سنا دیا

80

امام الحق کے بارے میں تحقیقات مکمل پی سی بی نے فیصلہ سنا دیا

قومی کرکٹ ٹیم کے اوپنر امام الحق کی مختلف لڑکیوں کے ساتھ کی جانے والی واٹس ایپ چیٹ اور نازیبا تصاویر سوشل میڈیا پر لیک ہونے کے بعد پی سی بی نے خود اس کی تحقیقات کا فیصلہ کیا تھا اور اب یہ تحقیقات مکمل ہو گئی ہیں۔ پاکستان کرکٹ بورڈ نے ایسے واقعات کی روک تھام کے لیے پلیئرز ایجوکیشن پروگرام پر سختی سے عمل کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔

فیصلہ کیا گیا ہے کہ اس حوالے سے کھلاڑیوں کو مکمل تعلیم دی جائے گی کہ سوشل میڈیا کا استعمال کس طرح کرنا ہے اور خود کو ایسے واقعات سے کیسے دور رکھنا ہے۔ پاکستان کرکٹ بورڈ حکام سینٹرل کنٹریکٹ میں بھی ایسی شق شامل کرنے کے خواہاں ہیں تا کہ مستقبل میں ایسے واقعات کی روک تھام ہو سکے۔ ذرائع کے مطابق امام الحق کے سامنے آنے والے اس سارے اسکینڈل کے بعد پاکستان کرکٹ بورڈ نے اپنی ابتداہی تحقیقات مکمل کرلی ہیں جس میں یہ بتایا گیا ہے کہ ورلڈ کپ کے دوران کسی کو کھلاڑیوں کے کمرے میں جانے کی اجازت نہیں تھی، ایسا کوئی واقعہ پیش نہیں آیا۔

دوسری جناب یہ الزامات لگانے والی مبینہ لڑکی کا ٹویٹر اکاﺅنٹ بند ہو گیا اور اب یہ انکشاف منظرعام پر آیا ہے کہ ’فریحہ‘ کے نام سے چلنے والے اکاﺅنٹ کے پیچھے کوئی لڑکی نہیں بلکہ ’ لڑکا‘ ہے۔بہت سے ٹوئٹر صارفین اس حوالے سے ٹویٹس کرنے کے علاوہ ناصرف اس لڑکے کی تصاویر شیئر کر رہے ہیں بلکہ اسی اکاﺅنٹ پر کی گئی کچھ پرانی ٹویٹس کے سکرین شاٹس بھی سامنے لا رہے ہیں اور اس سارے معاملے نے ایک اور بحث کا آغاز کر دیا ہے اور قومی کرکٹرز کے کردار کو مشکوک بنانےکی کوشش کرنے پر مذکورہ لڑکے کیخلاف قانون کے مطابق سخت ایکشن لینے کا مطالبہ شروع ہو گیا ہے۔

فیس بک پر ”اسد سہیل “ نامی ایک صارف نے فریحہ کے ٹوئٹر اور انسٹاگرام اکاﺅنٹس کے چند سکرین شاٹس شیئر کرتے ہوئے لکھا ”وہ لڑکی جس نے امام الحقکے بارے میں انکشافات کئے جعلی نکلی، پہلے اس نے اپنا یوزر نیم تبدیل کیا اور اب اپنا اکاﺅنٹ ہی بند کر دیا، یہ تصدیق ہو گئی ہے کہ امام الحق سے متعلق سامنے آنےوالے سکرین شاٹس بھی جعلی تھے، کیا ٹوئسٹ ہے“۔